ای ڈی او ہیلتھ کے آفس میں میٹنگ ، ضلعی ہیلتھ ملازمین کو احتجاج سے باز رکھنے کی پالیسی وضع

جہلم(عبدالغفور بٹ)باوثوق ذرائع سے معلوم ہوا ہے کہ رات گئے ای ڈی او ہیلتھ کے آفس میں ایک میٹنگ ای ڈی او ہیلتھ کی سربراہی میں کی گئی جس میں مختلف فورم استعمال کر کے ضلعی ہیلتھ ملازمین کو احتجاج سے باز رکھنے کی پالیسی وضع کی گئی،جس کے تحت پہلی باقاعدہ مذاکراتی میٹنگ ڈی ایچ کیو ہسپتال جہلم میں ہوئی،باوثوق ذرائع سے معلوم ہوا ہے کہ اس میں ضلعی ہیلتھ ملازمین کی صدر سیدہ ام لیلیٰ اور راجہ جنید بشیر جنجوعہ اور ہیلتھ الائیڈ پروفیشنل کے صدر اسلم خان نے بھی شرکت کی جس میں ای ڈی او ہیلتھ جہلم کے نمائندوں نے ان لوگوں سے ان کے مستقبل کے لائحہ عمل کی بابت پوچھا اور کچھ جو پرانے مسائل چلے آرہے ہیں ان کے حل کروانے کی یقین دہانی کرتے ہوئے تلقین کی کہ ہر مسئلے کا حل مذاکرات ہوتے ہیں لہذا آپ لوگ بھی ای ڈی او ہیلتھ سے مذاکرات کریں،جس پر ضلعی صدر سیدہ ام لیلیٰ نے واضح طور پر تمام سینئر آفیسرز کو بڑی مودبانہ طور پر کہا کہ جناب والا خون کا کوئی سودا یا کوئی لین دین نہیں ہوتا ہر طرف سے اگر دیکھا جائے تو عبدالقادرکے مرنے کا سبب ای ڈی او ہیلتھ ہی ہے اور اگر اس چیز کو فراموش بھی کر دیا جائے تو اس کے مرنے کے بعد اس کیلئے توہین آمیز کلمات اور شوکاز نوٹس کو معاف کرنا انسانیت کی تذلیل ہے ہم انسانوں کی جانیں بچانے کیلئے کام کرتے ہیں اور جو بندہ ہمارے ہی ایک ساتھی کے ظلم کی وجہ سے مر جائے اور مرنے کے بعد بھی چین نہ پائے اور شو کاز نوٹس پائے تو اس کے ساتھ یہ سلوک کرنے والے کو قطعاً معاف نہیں کیا جا سکتا ضلعی صدر نے یہ بھی واضح کیا کہ آپ لوگ تو پھر بھی درخواست کررہے ہیں مگر ای ڈی او اندرون خانہ مجھے اور میرے ساتھیوں کو روزانہ کی بنیاد پر ڈرا اور دھمکا رہا ہے ای ڈی او صاحب آپ ٰپر یہ واضح کر دیں کہ ہم ڈرنے والے نہیں رازق خدا کی ذات ہے زیادہ سے زیادہ آپ ہماری نوکری ختم کر سکتے ہیں تو ہمیں اس کا کوئی غم بھی نہیں ہوگا۔