سعیلہ میں گھریلو ناچاقی پر اوباش بھائیوں نے بہن اور ماں کو شدید تشدد کا نشانہ بنا ڈالا

جہلم(محمداشتیاق پال) سعیلہ میں گھریلو ناچاقی پر اوباش بھائیوں نے بہن اور ماں کو شدید تشدد کا نشانہ بنا ڈالا، تھانہ صدر کا انوکھا قانون ،چھٹی پر گئے تھانیدار کو درخواست مارک کر دی ، ڈی پی او کے حکم پر بھی مقدمہ درج نہ ہو سکا، ماں بہن کی ہڈیاں توڑنے والوں کی مقامی سیاسی شخصیت سرپرست،ڈی پی او سے تحفظ اور انصاف کا مطالبہ ، تفصیلات کے مطابق یونین کونسل کوٹلہ فقیر کے علاقے سعیلہ کے اوباش بھائیوں نوید ، وحید اورسدرہ نامی خاتون ماں باپ کو عید ملنے کیلئے آئی بہن سبینہ کوثرزوجہ ساجد حسین کو گھر سے نکالنے کیلئے شدید تشدد کا نشانہ بناتے ہوئے بازو توڑ ڈالا، اس دوران سبینہ کو چھڑوانے کیلئے آنیوالی ماں کو بھی ڈنڈوں اور آہنی راڈوں سے حملہ کرکے شدید زخمی کر دیا، سبینہ نے اپنے بہنوئی ساجد حسین اور ماں کے ہمراہ تھانہ صدرکو درخواست دی جہاں تھانہ صدر نے حسب معمول ٹال مٹول شروع کر دی اور چھٹی پر گئے اے ایس آئی تنویر کو درخواست مارک کر ٹرخا دیا، متاثرین کی جانب سے ڈی پی او آفس میں درخواست کے بعد ڈی پی او آفس نے درخواست نمبری 914تھانہ صدر کو مارک کر کے کاروائی کی ہدایت کی لیکن تاحال زخمیوں کا میڈیکل اور مقدمہ درج نہیں ہوسکا، جبکہ حملہ آورنوید اور وحید ولد عاشق حسین نے ماں اور بہن کو سنگین نتایج کے لئے تیار رہنے کی دھمکیاں دینا شروع کر رکھی ہیں جبکہ مقامی سیاسی شخصیت کی بھر پور سرپرستی کے باعث حملہ آور اب تک آزاد ہیں اور پولیس تھانہ صدر خاموش تماشائی بنی ہوئی ہے ۔ سبینہ کوثر ، اس کی ادھیڑ عمر ماں نے ڈی پی او جہلم سے انصاف اور تحفظ کی اپیل کی ہے ۔