امریکا نے اسامہ بن لادن کے کمپیوٹرسے ملنے والی دستاویزات جاری کردیں

نیو یارک: امریکا نے مئی 2011 میں ایبٹ آباد میں القاعدہ کے رہنما اسامہ بن لادن کے خلاف کے آپریشن کے دوران قبضے میں لی گئی لاکھوں دستاویزات جاری کردی ہیں۔
امریکی خفیہ ایجنسی سی آئی اے نے مئی 2011 میں القاعدہ کے رہنما اسامہ بن لادن کے خلاف کے آپریشن کے دوران اُن کے کمپیوٹرسے ملنے والی ساڑھے 4 لاکھ سے زائد دستاویزات، تصاویراورویڈیوزجاری کردیں، ان دستاویزات میں اسامہ بن لادن کی ذاتی ڈائری، ، ان کے خاندان کی ویڈیوز اور تصاویر، بچوں کے کارٹون، اسامہ بن لادن پربننے والی دستاویزی فلمیں، کمپیوٹر گیمز، پشتو اور بھارتی گانوں کے علاوہ ہالی ووڈ فلمیں بھی شامل ہیں۔
سی آئی اے حکام کا کہنا ہے کہ اسامہ بن لادن کے قبضے سے ملنے والی کچھ دستاویزات کو جاری نہیں کیا گیا ان میں سے کچھ امریکا کی قومی سلامتی کے منافی جب کہ کچھ کاپی رائٹ حقوق کی وجہ سے سامنے نہیں لائی جاسکیں۔ سی آئی اے کے سربراہ مائیک پومپیو کا کہنا ہے کہ جاری کی گئی دستاویزات سے امریکی عوام القاعدہ اور اس تنظیم کے ارکان کی منصوبہ بندی کو سمجھ سکیں گے۔
جاری کیے گئے مواد میں اسامہ بن لادن کے بیٹے حمزہ بن لادن کا ایک ویڈیو کلپ بھی شامل ہے۔ اس وقت حمزہ کو اسامہ بن لادن کا جانشین قراردیا جاتا تھا۔ یہ ویڈیو کلپ اس کی شادی کی تقریب کا ہے، اسامہ بن لادن کی ہلاکت کے بعد سے حمزہ کے بارے میں کچھ نہیں پتہ۔ اس کے علاوہ ان دستاویزات میں القاعدہ اور داعش کے درمیان اختلافات کو بھی بیان کیا گیا ہے۔
واضح رہے کہ سی آئی اے 2015 سے اب تک چار مرتبہ اسامہ بن لادن کے گھر سے ملنے والی دستاویزات کو مرحلہ وار منظر عام پر لاچکی ہے۔