جہلم قومی کھیل ہاکی روبہ زوال ،

جہلم(عبدالغفور بٹ)قومی کھیل ہاکی روبہ زوال ،ڈسٹرکٹ گورنمنٹ کی طرف سے گورنمنٹ ہائی سکول کے ساتھ متصل گراؤنڈ ہاکی کیلئے مختص کیا گیا ،جس پر لاکھوں کے فنڈ خرچ کر کے گراؤنڈ اور بلڈنگ بنائی،جو تباہی کا شکار ہو چکی ہے باتھ روموں کی بری حالت نشئی حضرات کا قبضہ،گراؤنڈ اور بلڈنگ ڈسٹرکٹ گورنمنٹ کی توجہ نہ دینے کے سبب تباہی کا شکار،تفصیلات کے مطابق ڈسٹرکٹ گورنمنٹ نے گورنمنٹ ہائی سکول جادہ جہلم کے ساتھ گراؤنڈ کو ہاکی گراؤنڈ کیلئے مختص کیا کروڑوں روپے خرچ کر کے باؤنڈری لگائی گئی اور کھلاڑیوں کیلئے چینجنگ روم اور واش روم بنائے گئے،لاکھوں روپے خرچ کر کے گراؤنڈ میں مٹی ڈلوا کر ہاکی کیلئے گراؤنڈ کو تیار کیا گیا۔ایک سروے کے مطابق اس وقت یہ منی اسٹیڈیم ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہے باتھ روم کی انتہائی بری حالت ہے جس پر چرسیوں اور پوڈریوں نے قبضہ جما رکھے ہیں جہاں تک کہ وہاں پر پڑے ہوئے سامان اور باتھ روموں کے اندر سے سنٹری کی اشیاء تک اکھاڑ دی گئیں۔رات کی تاریکی میں جرائم پیشہ عناصر کیلئے ایک محفوظ پناہ گاہ بن گئیں،جب ہم شام کو گراؤنڈ کے سروے کیلئے گے تو دیکھنے میں آیا کہ اس منی سٹیڈیم کے اندر جھاڑیاں اور گھاس پھوس اگا ہوا ہے ،گراؤنڈ کے اندر صفائی کا کوئی انتظام نہیں ہے۔لوہے کے گیٹ اور گرل کے سریے ٹوٹ ہوئے ہاکی گراؤنڈ میں موجود کھلاڑیوں سے پوچھا گیا توانہوں نے بتایا کہ جہلم میں اس گراؤنڈ کے علاوہ ہاکی کیلئے کوئی اور سرکاری گراؤنڈ نہیں ہے۔لمحہ فکریہ یہ بھی تھا کہ کچھ بچے وہاں پر پتنگیں بھی اڑا رہے تھے اورکچھ ہاکی گراؤنڈ کے اندر سائیکلنگ کر رہے تھے،ڈسٹرکٹ ہاکی ایسوسی جہلم کے جنرل سیکرٹری طارق محمود گراؤنڈ میں موجود تھے جب ان سے پوچھا گیا تو انہوں نے کہا کہ قومی کھیل دن بدن زوال پذیر ہو رہا ہے۔ہاکی کے کمرشل نہ ہونے کی وجہ سے بچے زیادہ کرکٹ کی طرف توجہ دیتے ہیں ہم نے دیکھا کہ ہاکی کی اس گراؤنڈ پر کرکٹ کھیلنے والے بے شمار بچوں نے قبضہ کیا ہوا تھا اور جگہ جگہ وکٹیں لگا کر کرکٹ کھیل رہے تھے۔ڈسٹرکٹ ہاکی ایسوسی ایشن کے جنرل سیکرٹری نے مزید بتایا کہ جب تک گورنمنٹ ہاکی کی سرپرستی نہیں کرے گی یہ قومی کھیل ختم ہو جائے گا ،جنرل سیکرٹری نے کہا کہ گراؤنڈ کی حالت زار آپ خود دیکھ رہے ہیں انہوں نے ہمیں کمرے اور باتھ روم دکھائے جن کی بری حالت تھی،جنرل سیکرٹری نے کہا کہ پاکستان فیڈریشن پنجاب ہاکی فیڈریشن اور پاکستان سپورٹس بورڈ کو قومی کھیل ہاکی کی طرف خصوصی توجہ دینی چاہیے اور بالخصوص چھوٹے شہروں میں ہاکی کی پروموشن کیلئے خصوصی فنڈ رکھنے چاہیے۔انہوں نے ڈسٹرکٹ گورنمنٹ جہلم سے درخواست کی کہ وہ فنڈ مہیا کرے یا خود گراؤنڈ اور بلڈنگ کے باتھ روموں کو ہمیں درست کروا دیں۔ اسی دوران ڈسٹرکٹ ہاکی ایسوسی ایشن جہلم کے سرپرست اعلیٰ محمداسحاق ڈار بھی گراؤنڈ میں آگئے جب ان سے پوچھا گیا تو انہوں نے کہا کہ گراس روٹ لیول سے ہاکی کو ختم کرنے کی وجہ سے اب یہ قومی کھیل ختم ہو تا جارہا ہے پاکستان جس کی ہاکی کے حوالے سے دنیا میں ایک پہچان بن چکی تھی ، نہایت ہی بدقسمتی کی بات ہے کہ اب وہ ٹائٹل دوبارہ حاصل کرنا ایک خواب بن چکا ہے ۔انہوں نے کہا کہ ایک وقت تھا جب سکول لیول کے ٹورنامنٹ انہی گراؤنڈوں میں ہوا کرتے تھے تو دنیا دیکھنے آتی تھی،چونکہ سکول میں سرکاری سرپرستی میں بچوں کو ہاکی سکھائی جاتی تھی اور سکولوں میں یہ کھیلنے والے بچے آگے چل کر نہ صرف جہلم بلکہ پاکستان کے نامور کھلاڑی بنتے انتہائی بدقسمتی کی بات ہے کہ اسی گراؤنڈ کی باؤنڈری کے ساتھ گورنمنٹ ہائی سکول اور گورنمنٹ جامع ہائی سکول موجود ہے جبکہ چند منٹوں کے فاصلے پر گورنمنٹ اسلامیہ سکول اور گورنمنٹ تبلیغ اسلام سکول جہلم ہیں جن کے بچوں نے ماضی میں انہی سکولوں سے ہاکی سیکھ کر پاکستان کے کلر پہنیے اور ملک کا نام روشن کیا لیکن صد افسوس اب ان سکولوں سے کوئی بچہ گراؤنڈ میں ہاکی کھیلنے نہیں آتا۔سرپرست اعلیٰ محمداسحاق ڈار نے کہا کہ ڈسٹرکٹ سپورٹس آفیسر ریٹائرمنٹ کیلئے جا چکے ہیں پچھلے تقریبا دو ماہ سے ڈسٹرکٹ سپورٹس آفیسر جہلم میں نہیں ہیں۔ڈسٹرکٹ گورنمنٹ کوئی توجہ ان گراؤنڈ کی طرف نہیں دے رہی اور نہ ہی ہاکی کیلئے کوئی مالی معاونت کی جارہی ہے ہاکی کے کچھ کلب مل جل کر اپنی مدد آپ کے تحت جہلم میں ہاکی کے کھیل کو زندہ رکھے ہوئے ہیں ۔بدقسمتی سے ڈسٹرکٹ ہاکی ایسوسی ایشن جہلم کے پاس کوئی فنڈ نہیں ہے جو کہ گراؤنڈ اور کھلاڑیوں کی بہتری کیلئے خرچ کیا جا سکے، انہوں نے زور دے کر کہا کہ فی الفور ڈسٹرکٹ سپورٹس آفیسر کی تعیناتی عمل میں لائی جائے تاکہ گراؤنڈوں کی حالت زار پر سپورٹس آفسر توجہ دے سکے،،سرپرست اعلیٰ نے کہا کہ میں خصوصی طور پر ہاکی کے سابق کھلاڑیوں کمال فیروز،طارق محمود،سلیم،منیب،آفتاب کا انتہائی مشکور ہوں جو جہلم میں ہاکی کے فروغ کیلئے انتھک محنت کر رہے ہیں اور کلبوں میں بچوں کو ہاکی سکھا رہے ہیں۔انہوں نے مزید کہا کہ ڈسٹرکٹ ہاکی ایسوسی ایشن جہلم نے بذریعہ نمائندہ پنجاب پاکستان ہاکی فیڈریشن کے سیکرٹری سے باقاعدہ تحریری درخواست کی ہے کہ وہ جہلم میں آسٹرو ٹرف لگائیں اور جہلم میں ہاکی کیلئے اکیڈمی کی منظوری دیں اور ایسوسی ایشن کو ہاکیاں اور بال مہیا کرے تاکہ ہم گراؤنڈ میں بچوں کو ترغیب دے سکیں کہ وہ آکر ہاکی کھیلیں۔انہوں نے کہا کہ میری ہاکی کے سابقہ کھلاڑیوں اور موجود کھلاڑیوں سے درخواست ہے کہ کم ازکم وہ اپنے بچوں کو ہاکی کے گراؤنڈ میں ساتھ ضرور لائیں تاکہ ہم اس قومی کھیل کو مستقبل میں بھی زندہ رکھ سکیں۔آئیے ہم سب ملکر کھیل کے میدان آباد کریں تاکہ ہسپتال ویران کر سکیں۔