سمندرکے گہرے ترین مقام بھی انسانی گندگی سے غیر محفوظ

ندن: سمندروں سے متعلق ایک نئی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ انسانی آلودگی سمندر کے گہرے ترین مقامات تک پہنچ رہی ہے اور مضر اور پابندی کے حامل خطرناک کیمیکل سمندروں کی تہہ میں سرایت کرکے وہاں موجود جانداروں کو داغدار کررہے ہیں۔
ہفت روزہ سائنسی جریدے نیچر میں شائع ہونے والی ایک رپورٹ کے مطابق 11 کلومیٹر گہرائی میں انسولیٹنگ کیمیکلز اور ریفریجریشن میں استعمال ہونے والے مائعات وہاں موجود حساس جانداروں کو نقصان پہنچارہے ہیں اور خیال ہے کہ یہ پلاسٹک کے کچرے سے خارج ہوئے ہیں۔
اس سے قبل ماہرین سمجھ رہے تھے کہ سمندری آلودگی زیادہ گہرائی تک نہیں جاتی لیکن اب انسانی سرگرمیوں کے دوررس اثرات مرتب ہورہے ہیں۔ ماہرین نے سمندروں میں قدرتی طور پر موجود گہری کھائیوں مثلاً ماریانا ٹرینچ اور کراماڈیک میں خاص آبی روبوٹ بھیجے اور وہاں موجود ایک جانور ایمفی پوڈ پر تحقیق کی ہے۔ کئی ایمفی پوڈز میں پولی کلورینیٹڈ بائی فینائلز (پی سی بی) کے آثار دیکھے گئے جن پر 40 سال قبل کینسر اور دیگر بیماریوں کی بنا پر پابندی عائد کردی گئی تھی۔