آخر کب تک ہم قیمتی جانوں کے ضیاع پر خاموش تماشائی بنے رہیں گے،ملک ثاقب الخیری

للِہ ( نور چغتائی سے )ثابت ہو گیا کہ حالات حکومتی کنٹرول میں نہیں آخر کب تک ہم قیمتی جانوں کے ضیاع پر خاموش تماشائی بنے رہیں گے سیکورٹی انتظامات میں بڑی دراڑیں ہیں لاہور کے بعد پشاور سانحہ میں دہشتگردی کے واقعہ سے پوری قوم سوگوار ہے دہشت گردوں کو لگام دینے کے لیے ہم سب کو سیاسی اختلافات بھلا کر متحد ہونے کی ضرورت ہے حکومت کی پہلی ترجیح امن و امان ہونی چاہیے ہم سانحہ لاہور اور پشاور کی بھرپور مذمت کرتے ہیں۔ان خیالات کا اظہار امیدوار ایم این اے حلقہ NA63 ملک ثاقب الخیری نے ٹیلیفونک گفتگو کرتے ہوئے کیا انھوں نے کہا کہ اگر نیشنل پلان پر مکمل طور پر عملدرآمد ہوتا تو آج یہ صورت حال نہ ہوتی لاہور اور پشاور سانحہ میں قیمتوں جانوں کا ضیاع المیہ ہے حکومت ملک دشمنوں کا خاتمہ کرنے کے لیے یقینی اقدامات کرے دہشت گردوں کا کوئی مذہب نہیں ہوتاملک سے دہشتگردی کے خاتمے کے لیے پوری قوم کو تمام تر سیاسی اختلافات بھلا کر متحد ہونا ہو گا نااہل حکمرانوں نے ملکی سالمیت کو داوٗ پر لگا دیا سانحہ لاہور اور پشاور میں جو ملزمان ملوث ہوں انہیں بے نقاب کر کے قرار واقعی سزا دی جائے دی جائے تاکہ باقی دہشت گردوں کو لگام دی جا سکے اور انھوں نے کہا کہ بے روزگا ر پڑھے لکھے نوجوان ہاتھوں میں ڈگریاں لیے نوکریوں کے لیے مارے مارے پھر رہے ہیں اور موجودہ حکمران عوام کو ریلیف دینے میں بری طرح ناکام ہو چکے ہیں حکمرانوں نے صرف اپنے چہیتوں کو ہر سطح پر نوازا ہے باقی عوام کو اپنے رحم و کرم پر ہی چھوڑ دیا ہے موجودہ حکومت کرپشن کی دلدل میں بری طرح پھنس چکی ہے عوام کرپٹ حکمرانوں سے چھٹکارے کے لیے دعائیں مانگ رہی ہے