پاناما کیس؛ تحریک انصاف کے وکیل نعیم بخاری کے جوابی دلائل مکمل

اسلام آباد: سپریم کورٹ میں پاناما کیس کی سماعت کے دوران تحریک انصاف کے وکیل نعیم بخاری نے جوابی دلائل مکمل کرلیے ہیں۔
جسٹس آصف سعید کھوسہ کی سربراہی میں سپریم کورٹ کا لارجر بنچ پاناما کیس کی سماعت کررہا ہے، سماعت کے دوران تحریک انصاف کے وکیل نعیم بخاری نے جوابی دلائل پر کہا کہ گلف اسٹیل کے واجبات 63 ملین درہم سے زیادہ تھے لیکن اس سے متعلق کوئی وضاحت نہیں آئی، جس پر جسٹس اعجاز افضل نے کہا کہ ابتدائی دلائل میں آپ نے یہ بات نہیں کی۔
نعیم بخاری نے کہا کہ مریم نواز کی دستخط والی دستاویز میں نے تیار نہیں کی۔ جسٹس عظمت سعید شیخ نے ریمارکس دیئے کہ آپ مریم کے دستخط والی دستاویز کو درست کہتے ہیں جب کہ شریف فیملی اس دستاویز کو جعلی قرار دیتی ہے، جسٹس اعجاز افضل نے ریمارکس دیئے کہ متنازعہ دستاویز کو چھان بین کے بغیر کیسے تسلیم کریں، عدالت میں دستخط پر اعتراض ہو تو ماہرین کی رائے لی جاتی ہے، ماہرین عدالت میں بیان دیں تو ان کی رائے درست مانی جاتی ہے۔ عدالت ٹرائل کورٹ نہیں جو یہ کام کرے، نعیم بخاری نے کہا کہ یوسف رضا گیلانی کیس میں عدالت ایسا کر چکی ہے۔ جسٹس اعجاز افضل نے ریمارکس دیئے کہ گیلانی کیس میں عدالت نے توہین عدالت کی درخواست پر فیصلہ کیا تھا۔ نعیم بخاری نے کہا کہ یہ بھی وزیراعظم کے ان اثاثوں کا مقدمہ ہے جو ظاہر نہیں کیے گئے۔
جسٹس اعجاز افضل نے ریمارکس دیئے کہ کیا ایسی دستاویزات کو ثبوت مانا جا سکتا ہے، عدالت نے ہمیشہ غیر متنازعہ حقائق پر فیصلے کیے، کیا ہم قانون سے بالاتر ہو کر کام کریں۔ عدالت اپنے فیصلوں میں بہت سے قوانین وضع کر چکی ہے، جسٹس گلزار احمد نے کہا کہ بنیادی حقوق کا معاملہ سن رہے ہیں، مقدمہ ٹرائل کی نوعیت کا نہیں۔
نعیم بخاری نے کہا کہ کیا دنیا میں کسی نے پاناما لیکس کو چیلنج کیا ہے، وزیر اعظم نے بھی موزیک فرانسیکا کو کوئی قانونی نوٹس نہیں بھجوایا، 1980 سے 2004 تک قطری شیخ بینک کا کردار ادا کرتے رہے، سرمایہ کاری پر منافع اور سود بھی بنتا گیا، سالہا سال تک قطری مراسم کا کوئی ذکر نہیں کیا گیا، قطری نے کہہ دیا کہ قرض کی رقم اس نے ادا کی، اتنی بڑی رقم بینک کے علاوہ کیسے منتقل ہوگئی، انہوں نے اخبار میں پڑھا کہ اسی قطری کو ایل این جی کا ٹھیکہ دیا گیا، وزیر اعظم نے اپنے خطاب میں سچ نہیں بولا، انہوں نے ایمانداری کا مظاہرہ نہیں کیا، گیلانی کیس کی طرح میں بھی عدالت سے ڈیکلریشن مانگ رہاہوں، جسٹس گلزار احمد نے ریمارکس دیئے کہ قطری ٹھیکے والی بات مفادات کے ٹکراؤ کی جانب جاتی ہے۔
جسٹس آصف سعید کھوسہ نے کہا کہ ہمارے سامنے ایل این جی کے ٹھیکے کا معاملہ نہیں، دستاویزات پر نہ دستخط ہیں نہ کوئی تاریخ، ادائیگی کس سال میں کی گئی وہ بھی نہیں لکھا، غیر تصدیق شدہ دستاویزات مسترد کرنا شروع کیں تو 99.99 فیصد کاغذات فارغ ہو جائیں گے، ایسی صورت میں ہم واپس اسی سطح پر آ جائیں گے، دونوں فریقین کی دستاویزات کا ایک ہی پیمانہ پر جائزہ لیں گے۔
نعیم بخاری کی جانب سے جوابی دلائل مکمل کیے جانے کے بعد شیخ رشید نے اپنے دلائل کا آغاز کیا۔ انہوں نے کہا کہ میں باقاعدگی سے جسٹس اکیڈمی آتا ہوں،اتنے تسلسل سے میں کبھی نا تو اسکول گیا اور نہ کالج، عدالت نے سماعت کے دوران 371 سوالات پوچھے ، جن میں سے زیادہ تر شیخ عظمت کے تھے، جواب نہ ملنے پر جج صاحب کا دل زخمی ہوا، جج صاحب کا صحت یاب ہونا اللہ کا احسان ہے، میرا کیس اسمارٹ، سویٹ اور شارٹ ہے، جس پر جسٹس آصف سعید کھوسہ نے کہا کہ آج آپ نے اسلگش کا لفظ استعمال نہیں کیا۔