میں نے پنجاب اسمبلی میں خواتین یونیورسٹی کی قرار داد پیش کی تھی ،ڈاکٹر گلشن حقیق مرزا

جہلم(سید جاوید رضوی)میں نے پنجاب اسمبلی میں خواتین یونیورسٹی کی قرار داد میں پیش کی تھی ،جس کا ثمرآج اسلام آباد خواتین یونیورسٹی ہے ان خیالات کا اظہار ممتاز سماجی رہنما اور نامور گائناکالوجسٹ محترمہ ڈاکٹر گلشن حقیق نے اپنے کلینک میں موجود خواتین سے پرانی یادیں شیر کر تے ہوئے کیا ، انہوں نے کہاکہ یہ ہماری خوش قسمتی ہے کہ ہمیں مسلمان رہنماؤں کی جدجہد سے پاکستان جیسا عظیم ملک ملا ،مگرہم نے اس کو کیا بنا دیا یہ ملک جو اسلام کی مثالی تصویر بن کر ابھرنے کی بجائے دشمنوں کے حصار میں گھر گیا اور ہمارے ملک میں ہر طرف افرا تفری ہے اور اس مملکت خداداد کا ہر شہری مقروض ہو گیا ہے ،ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ آج خواتین کو کام کاج اور اظہار رائے اور ووٹ کے حق کی آزادی ہے مگر خواتین مقصد خدمت انسانیت کی بجائے دوسرے جھمیلوں میں پڑ گئی ہیں ،انہوں نے بتایا کہ گورنر پنجاب جنرل عتیق الرحمان کے دور میں بطور رکن پنجاب اسمبلی خواتین یونیورسٹی کی قرارداد پیش کی جو کثرت رائے سے منظور کی گئی اور آ ج اس قرار داد کی بدولت اسلام آباد میں خواتین یونیورسٹی کا قیام عمل میں آچکا ہے ،جس کے لئے میں حکومت پاکستان کی مشکور ہوں کہ انہوں نے پردہ دارطالبات کے لئے تعلیم کے دروازے کھول دیئے۔ آخر میں ڈاکٹر گلشن حقیق مرزا نے کہا کہ جہلم میں خواتین کے روزگار کے مواقع نہائت ہی کم ہیں ،حکومت پنجاب سے اپیل کی ہے کہ جہلم میں کاٹیج انڈسٹری متعارف کرائے اور ملازم پیشیہ خواتین کے لئے ٹرانسپورٹ کی سہولیات فراہم کرے۔