یونیسکومیں مسجد اقصیٰ کی قراداد مسلمانوں کے حق میں منظور ہونے پر اسرائیلی سیخ پا ہوگئے ، امیر ابو قتیبہ جرار

جہلم(وسیم تبریز)ہندووں کے بعد یہودیوں کی اسلام دشمنی کی انتہاء ،یونیسکومیں مسجد اقصیٰ کی قراداد مسلمانوں کے حق میں منظور ہونے پر اسرائیلی سیخ پا ہوگئے ،یہ بات جماعۃ الدعوۃ کے ضلعی امیر ابو قتیبہ جرار نے اپنے بیان میں کہی ،انہوں نے کہا کہ اس رائے شماری میں پاکستان،روس ،چین سمیت 24 ممالک نے رائے شماری میں حصہ لیا ،جبکہ یہاں بھی بھارت کی خباثت برقرار رہی،اقوم متحدہ کے ادارے یونیسکو میں مسجد اقصیٰ کے بارے تعین اور رائے شماری کی گئی اور اسمیں اکثریت رائے سے یہ قرادادمنظور کی گئی کہ مسجد اقصیٰ مسلمانوں کا قبلہ اول ہے ،اور مسلمانوں کا حق ہے،لیکن اس بات پر اسرائیل نے انتہائی برہمی کا اظہار کیا ،یہود و ہنود کبھی مسلمانوں کے دوست نہیں ہو سکتے یہ اللہ کا قرآن مجید میں فیصلہ ہے ،لیکن اس کے باوجود بھی ہم ان اغیار پر توقعات وابستہ کیے ہوئے ہیں ،انکی جی حضوری کو اپنا شعار سمجھتے ہیں ،اور یہی کفار مسلمانوں کو اپنا پہلا دشمن سمجھتے ہیں اور ظلم وستم کے پہاڑ توڑتے ہیں ،ہندوستان کی زد میں کشمیری او ر اسرائیل کی زد میں فلسطینی عرصہ دراز سے ظلم وستم کانشانہ بن رہے ہیں ،اور اقوام متحدہ کی سب سے پرانی قرادادوں میں یہ دونوں بہت پرانی ہیں ،لیکن نام نہاد اقوام متحدہ اب تک یہ دونوں قردادیں نہیں حل کر سکی ،اور مسلمانوں کے پاس کوئی ایسا مضبوط پلیٹ فارم نہیں جہاں اس مسئلے کو اجاگر کیا جاسکے اور حل کیا جا سکے ،حالانکہ مسلمانوں کی تعداد اور مسلم ممالک کی تعداد کم نہیں ،لیکن آپس میں اتفاق کی کمی ہے ،اور یہی ہماری ناکامی کاسبب ہے،اللہ تعالیٰ ہمیں اتفاق دے تا کہ ہم اپنے مسائل اغیار کے پاس حل کرونے کہ خود حل کریں ،اور یہ تب ہی ممکن ہے جب ہم میں تافاق ہوگا